191

جدہ ( نامہ نگار )16 دسمبر سقوط ڈھاکہ شہدائے کی 48 ویں برسی کی یاد میں مجلس محصورین پاکستان کے پلیٹ فارم سے محصورین کی واپسی اور الحاق کشمیرکے بغیر پاکستان نا مکمل ہے کے عنوان سے تقریب کا اہتمام جس کے مہمان خصوصی معروف اسکالر ڈاکٹرعلی الغامدی تھے

جدہ ( نامہ نگار )16 دسمبر سقوط ڈھاکہ شہدائے کی 48 ویں برسی کی یاد میں مجلس محصورین پاکستان کے پلیٹ فارم سے محصورین کی واپسی اور الحاق کشمیرکے بغیر پاکستان نا مکمل ہے کے عنوان سے تقریب کا اہتمام جس کے مہمان خصوصی معروف اسکالر ڈاکٹرعلی الغامدی تھے

تقریب سے خطاب کرتے ہوئے سابق سعودی سفارت کار ڈاکٹر علی الغامدی نے کہا کہ سن 1971 میں سقوط ڈھاکہ نہ صرف پاکستان بلکہ پوری امت مسلمہ کے لئے ایک افسوسناک تاریخی واقعہ ہے۔سقوط ڈھاکہ کے محرکات کے بارے میں بات نہیں کریں گے لیکن بدقسمتی کی بات ہے کہ جب پاک فوج نے جنگی قیدیوں کی واپسی کے معاہدے پر دستخط کیے تو انہوں نے محصورمحب وطن پاکستانیوں کی واپسی اور ان کے کوئی تحفظ کے کئے کچھ نہیں کیا جنہوں نے جنگ میں ان کا ساتھ دیا تھا۔ پاکستانی وزیر اعظم عمران خان ، چیف آف آرمی قمرجاوید باجوہ ، چیف جسٹس جناب گلزار سے گزارش کرتا ہوں کہ وہ انھیں پاکستان میں آباد کرنے کے لئے فوری اقدامات کریں اور انہیں حب الوطنی کا صلہ دیں۔تقریب کے مہمان خصوصی چیئرمین پاکستان رائٹرز فورم (پی ڈبلیو ایف) انجینئرسید نیازاحمد نے ڈاکٹرالغامدی تقریر کی تعریف کی۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان ان محصور پاکستانیوں کو پاسپورٹ جاری کرے جو انہیں کیمپوں سے باہر جانے کی اجازت دے سکے۔تقریب سے امیر محمد خان نورالحسن گجر
محمد امانت اللہ خان نے اپنے خطاب میں 1971 کی جنگ کےشہداکوزبردست خراج تحسین پیش کیا۔ کنوینرسید احسان الحق ڈاکٹرعلی الغامدی، صحافیوں مصطفی خان جاوید ناصر ،حسن بٹ ،ملک عاصم کا تقریب میں شرکت پر شکریہ ادا کیا۔ اور آخر میں ایک قرداد پاس جس میں صدرڈاکٹرعارف علوی اور وزیر اعظم عمران خان سے اپیل کی گی کے وہ محصورپاکستانیوں کی وطن واپسی اور بحالی کا کام فوری طور پر شروع کریں۔ فنڈ کی قلت پر قابو پانے کے لئے پی آر سی کی تجویز”سیلف فنانس کی بنیاد” پر محصورپاکستانیوں کی آباد کاری” پر عمل درآمد کریں مقبوضہ کشمیر میں ہندوستانی فوج کی بربریت کی مذمت کرتے ہیں مسئلہ کشمیر کا واحد حل یہ ہے کہ اقوام متحدہ کی قرارداد کے مطابق کشمیر میں رائے شماری کا اہتمام کیا جائے۔ہم آرمی پبلک اسکول پشاور میں 2014 میں دہشت گردوں کے وحشیانہ حملے کی مذمت کرتے ہیں اور دہشت گردوں کو سخت سزا دینے کا مطالبہ کرتےہیں۔ قبل ازاں سمپوزیم کا آغاز انور چودھری نے تلاوت قران پاک سےہوا۔ معروف شاعرآفتاب ترابی نے نعتِ رسولِ مقبول ﷺ پیش کی۔ شاعر زمرد خان سیفی اور آفتاب ترابی نے شہدا مشرقی پاکستان کو خراج عقیدت پیش کیا اورمحصورین کی حالت زار پر نظمیں پیش کیئں۔
آخیر میں انور چودھری نے کشمیر، برما، محصورین، عالم اسلام کی سربلندی اور پی آر سی کے سینئر ممبر فہیم الدین کے بھائی نسیم الدین کے انتقال پر ان کے لئے دعائے مغفرت کی۔
سمپوزیم کی نظامت کے فرائض سید مسرت خلیل نے سرانجام دیئے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں