102

وزیراعظم پاکستان کی معاون خصوصی فردوس عاشق اعوان کی جدہ میں میڈیا سے گفتگو

معاون خصوصی فردوس عاشق اعوان نے جدہ میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ذرائع ابلاغ کے حوالے سے سال 2020 پاک سعودی تعلقات کو مضبوط اور مؤثر بنانے کے حوالے سے انتہائی اہم ثابت ہو گا.
ان کا کہنا تھا کہ پاکستان اور سعودی عرب کے درمیان میڈیا تعلقات پر بات چیت چل رہی ہے اور امید ہے کہ پریس ایجنسی اور سعودی پریس ایجنسی کے درمیان بہت جلد معاہدہ طے پائے گا جس کے بعد پاکستانی ڈراموں اور فلموں کو بھی سعودی عرب کے ٹی وی چینلز اور سینماؤں میں دکھایا جائے گا.. انہوں نے یہ بھی کہا کہ کسی بھی تھرڈ پروسیس کو حقیقت میں تبدیل کرنے کے لیے لانگ ٹرم روڈ میپ اور طریقہ کار کی ضرورت ہوتی ہے اور امید کرتی ہوں کہ اپنے اگلے دورے میں ان تمام چیزوں پر عملدرآمد کیلئے ایک مخصوص لائحۂ عمل تیار کر سکیں گےجس میں او آئی سی کے سیکرٹری جنرل سمیت تمام ممبر ممالک کو آن بورڈ آنا ہو گا..
مزید انہوں نے کہا کہ جس پروگرام کی بنیاد رکھی جانے والی ہے اس سے یقینی طور پر ہماری آنے والی نسلیں مستفید ہوں گی کیونکہ دنیا کو مختلف زبانوں میں اپنے مذہب، کلچر اور معاشرتی اقدار سے ہم آہنگ بنانا ہماری سب سے بڑی ضرورت ہے..
فردوس عاشق اعوان کا کہنا تھا کہ او آئی سی کو اسلامک چینل بنانا چاہیے جو صرف اسلامی تعلیمات اور مسلمانوں کے حقوق پر مبنی ہو….
پاکستان، ترکی اور انڈونیشیا ایک چینل بنا رہے ہیں جس کا اعلان وزیر اعظم عمران خان نے کر دیا ہے اور ہم چاہتے ہیں اس میں سعودیہ بھی ہمارا ساتھ
دے….
مشرف کیس کے حوالے سے ان کا کہنا تھا کہ وہ اس بارے میں کوئی گفتگو نہیں کر سکتیں.
ہم عدالتی فیصلوں کا احترام کرتے ہیں اور آرمی چیف کے فیصلے پر ہم ابھی مشاورت کر رہے ہیں.
اوورسیز کے بارے میں ان کا کہنا تھا کہ ہماری حکومت اوورسیز کے لیے بھی خصوصی اقدام کر رہی ہے تا کہ زیادہ سے زیادہ لوگ پاکستان آئیں اور کاروبار کریں…. ٹورزم کے لیے آن لائن ویزہ پالیسی بنائی گئی ہے جس سے زیادہ لوگ پاکستان آئیں گے…

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں